Sad Death Poetry In Urdu

Sad Death Poetry In Urdu


Kawishpoetry have a latest collection of Sad Death Poetry In Urdu, Best Urdu Shayari on death, Poetry about death in urdu, Shayari on death in Urdu, Read for Mout Poetry.
Urdu Poetry is very popular in Pakistan and especially in India. Read for Sad Death Poetry In Urdu.

Motivational Shayari In Urdu


Sad Death Poetry In Urdu
Sad Death Poetry In Urdu

Bichda kuch is ada se ki rut hi badal gai
Ik shakhs saare shahr ko viran kar gaya

बिचड़ा कुछ इस ऐडा से की रुत ही बदल गई
इक शख्स सारे शहर को वीरान कर गया

بچھڑا کچھ اِس ادا سے کے رُت ہی بدل گئی
اِک شخص سارے شہر کو------- ویران کر گیا
Sad Death Poetry In Urdu
Sad Death Poetry In Urdu

Maut uski hay kare jis ka zamana afsos
Yoon to duniya mein sabhi aay hain marne keliye

मौत उसकी है करे जिस का ज़माना अफ़सोस
यूं तो दुनिया में सभी ाय हैं मरने केलिए

مُوت اس کی ہے کرے جس کا زمانہ افسوس
یُوں تو دنیا میں سبھی آئے ہیں مر_نے کے___ لیے



Sad Death Poetry In Urdu
Sad Death Poetry In Urdu

Jo log maut ko zalim qarar daty hain
Khuda milae unhen zindagi k maron se

जो लोग मौत को ज़ालिम क़रार देती हैं
खुदा मिले उन्हें ज़िन्दगी क मारों से

جو لوگ مُوت کو ظا-لم قرار دیتے ہیں
خُدا ملاۓ انہیں زندگی کے مارُوں سے

Sad Death Poetry In Urdu
Sad Death Poetry In Urdu

Read More Death Poetry

Zamana bade shauq se sun raha tha
Hamin so gae dastan kahte kahte

ज़माना बड़े शौक़ से सुन रहा था
हमीं सो गए दास्ताँ कहते कहते

زمانہ بڑے شوق سے سُن رہا تھا
ہمیں سو گئے داستان کہتے-- کہتے


Sad Death Poetry In Urdu
Sad Death Poetry In Urdu

Read a Love Poetry

Teri wafa mein mili arzu e maut mujhe
Ju maut mil gai hoti tu koi baat bhe thi

तेरी वफ़ा में मिली आरज़ु इ मौत मुझे
जो मौत मिल गई होती तो कोई बात भी थी

تیری وفا میں ملی آرزوِ مُوت مجھے 
جو مُوت مل گئی ہوتی تو کوئی بات بھی _تھی

Best Urdu Shayari on death


death poetry
death poetry


بہت تڑپاۓ گی درد جُدائی تم کو
ہمارا کیا ! ہم تو مر جائیں گے 👽

Read a Sad Poetry


Vo jin k zikr se ragon mein daudti then bijliyan
Unhin ka haath ham ne chuu k dekha kitna sard hay

वो जिन क ज़िक्र से रगों में दौड़ती थें बिजलियाँ
उन्हीं का हाथ हम ने छू क देखा कितना सार्ड है

وہ جن کے ذکر سے رگُوں میں دوڑتی تھی بجلیاں
انہی کا ہاتھ ہم نے چُھو کے دیکھا کتنا سرد ہے

Chod ke mal o daulat saari duniya me apni
Khali hath guzar jaate hain kaise kaise log

छोड़ के माल ओ दौलत सारी दुनिया में अपना
खाली हाथ गुज़र जाते हैं कैसे कैसे लोग

Read More Poetry Death

چھوڑ کے محل و دولت ساری دنیا میں ا-پنی
خالی ہاتھ گُزر جاتے ہیں کیسے کیسے لوگ

Best Urdu Shayari on death


Kaun jeene keliye marta rahy
Lo sambhalo apni duniya ham chale

कौन जीने केलिए मरता रहय
लो संभालो अपनी दुनिया हम चले

کون جینے کے لیے مرتا رہے
لو سنبھا-لو اپنی دنیا ہم چلے


Death poetry in urdu


زندگی کی بساط پر باقی
موت کی ایک چال ہیں ہم لوگ


ساری عمر مرنے کی دعا کرتے رہے
جب جینا چاہا دُعا قبول ہوگئی


دیکھ میں گردشِ ایام اٹھا لایا ہوں
اب بتا کون سے لمحے کو بلاؤں واپس


زندگی بے وفا ہے ایک دن ٹکرائے گی
موت محبوبہ ہے اپنے ساتھ لے جائے گی


میں تلاش میں ہوں اس سکون کے
اہل جہاں جسے موت کہتے ہیں


نہیں ممکن ہے اگر ادراکِ تمنا ابنِ آدم کی
مگر جس وقت کے انسان ہو جائے فنا لوگو


سنبھل کر رکھ لینا میری میت کو "اے دوست"
اگر کوئی پوچھے تو کہہ دینا کے پیار سے سلایا ہے


موت تو فقط نام سے بد نام ہے ورنہ
تکلیف تو زندگی بھی بہت دیتی ہے


زندگی چارہ ساز غم نہ سہی
موت ہی غمگُسار ہو جائے

موت برحق ہے تو یادوں کو کیوں نہیں آتی



محبت جسے بخش دے زندگانی
نہیں موت پہ ختم اس کی کہانی


جو زیست کو نہ سمجھیں جو موت کو نہ جانیں
جینا انہیں کا جینا مرنا انہیں کا مرنا


اسے لگتا ہے میں اس سے بچھڑ کے خوش ہوں
مجھے لگتا ہے میں جوانی میں مر جاؤں گی


کھیل کچھ ایسا دکھایا ہے تعصب نے یہاں
ناچتی ہے موت سر پر زندگی خاموش ہے


میرے دل کی دہلیز پر کبھی تم آتے تو سمجھ جاتے
کہ تنہائی کی اذیت سے مجھے موت کیوں آسان لگتی ہے


جس دن میری موت کی خبر آئے گی لوگ کہیں گے
ملا تو نہیں تھا "کاوش" پر شاعری اچھی کرتا تھا


میری موت پر تم بھی آنا
میں اپنے جنازے پر رونق چاہتا ہوں


میں چاہتی ہوں اسے مجھ سے سخت نفرت ہو
میں چاہتی ہوں میری موت پر وہ رقص کرے


مر گیا تنہائی کی بانہوں میں کوئی بے مُراد
تعزیت کے واسطے آئے پرندے موت پر


خوب و زشت جہاں کا فرق نہ پوچھ
موت جب ائی ____ سب برابر تھا



میرا گمان ہے شاید یہ واقعہ ہو جائے
کہ شام مجھ میں ڈھلے اور سب فنا ہو جائیں


ہاں اے فلک پیرِ جواں تھا ابھی عارف
کیا تیرا بگڑتا جو نہ مرتا کوئی دن اور


پُتلیاں تک بھی تو پھر جاتی ہیں دیکھو دم نزع
وقت پڑتا ہے تو سب آنکھ چُرا جاتے ہیں 


نہ سکندر ہے نہ دارا ہے نہ قیصر ہے نہ جم
بے محل خاک میں ہیں قصر بنانے والے 


موت نہ آئی علوی چٹی میں گھر جائیں گے


اپنے کاندھوں پہ لیے پھرتا ہوں اپنی ہی صلیب
خود میری موت کا ماتم ہے میرے جینے میں 


اے ہجر وقت ٹل نہیں سکتا ہے موت کا
لیکن یہ دیکھنا ہے کہ مٹی کہاں کی ہے 


وداع کرتی ہے روزانہ زندگی مجھ کو
میں روز موت کے منجدھار سے نکلتا ہوں


کسی کے ایک اشارے میں کس کو کیا نہ ملا
بشر کو زیست ملی موت کو بہانہ ملا  


گھسیٹتے ہوئے خود کو پھرو گے زیب کہاں
چلو کہ خاک کو دے آئے یہ بدن اس کا


نشہ تھا زندگی کا شرابوں سے تیز تر
ہم گر پڑے تو موت اٹھا لے گئی ہمیں 


بلا کی چمک اس کے چہرے پہ تھی
مجھے کیا خبر تھی کہ مر جائے گا 


موت سے کیوں اتنی وحشت جان کیوں اتنی عزیز
موت آنے کے لیے ہے جان جانے کے لیے 


آگاہ اپنی موت سے کوئی بشر نہیں
سامان سو برس کا پل کی خبر نہیں 

یہ کفن یہ قبر یہ جنازے رسمِ شریعت ہیں اقبال
مر تو انسان تب ہی جاتا ہے جب یاد کرنے والا کوئی نہ ہو


اپنا بہت _______________ خیال رکھا کرو
ابھی میں نے تمہیں اپنی موت کا غم دینا ہے


اٹھ گئی ہیں سامنے سے کیسی کیسی صورتیں
روئیے کس کے لیے کس کس کا ماتم کیجئے

ہر گام سناتے ہو خبر موت کی مجھ کو
پاؤں سے ادا کرتے ہو پیغام قضا ہے
زندہ ہوا محشر میں مُردہ ہی رہا میں
تھا زِیست میں کُشتہ تیرے پاؤں کی صدا کا


Post a Comment

1 Comments