Saghar Siddiqui Famous Poetry - Saghar Siddiqui

 Saghar Siddiqui Poetry



Saghar Siddiqui Famous Poetry - Saghar Siddiqui
Saghar Siddiqui Poetry


Hashar me kon gavai meri dega Saghar
Sab tumhary hi tarf dar nazar aaty hain

حشر میں کون گواہی میری دے گا ساغر
سب تمہارے ہی طرفدار نظر آتے ہیں


Saghar Siddiqui Famous Poetry - Saghar Siddiqui
Saghar Siddiqui Poetry


آؤ اِک سجدہ کریں عالمِ مدہوشی میں
لوگ کہتے ہیں کہ ساغر کو خدا یاد نہیں


Saghar Siddiqui Famous Poetry - Saghar Siddiqui
Saghar Siddiqui Poetry

saghar siddiqui poetry pic

Ab apni haqeeqat bhi Saghar be rabt kahani lagti hay
Duniya ki haqeeqat kiya kahiye kuch yaad rahi kuch bhool gaye

اَب اپنی حقیقت بھی ساغر بے ربط کہانی لگتی ہے
دنیا کی حقیقت کیا کہیے کچھ یاد رہی کچھ بھول گئے


Saghar Siddiqui Famous Poetry - Saghar Siddiqui
Saghar Siddiqui Poetry


Maut kahty hain jis ko aay Saghar
Zindagi ki koi kadi hogi

موت کہتے ہیں جس کو اے ساغر
زندگی کی کوئی کڑی ہو گی

Poetry In Urdu Saghar Siddiqui


Saghar Siddiqui Famous Poetry - Saghar Siddiqui
Saghar Siddiqui Poetry


Huron ki talab or mai o Saghar se hay nafrat
Zahid tery irfan se kuch bhool howi hay

حوروں کی طلب اور مے و ساغر سے ہے نفرت
زاہد تیرے عرفان سے کچھ بھول ہوئی ہے


Saghar Siddiqui Famous Poetry - Saghar Siddiqui
Saghar Siddiqui Poetry


Ham banaenge yahan Saghar nai tasveer e shauq
Ham takhayul k mujadid ham tasavur k imama

ہم بنائیں گے یہاں ساغر نئی تصویرِ شوق
ہم تخیُل کے مُجدد ہم تصور کے اِمام


Saghar Siddiqui Famous Poetry - Saghar Siddiqui
Saghar Siddiqui Poetry


اس نے اِک بار جو محفل میں اٹھائی آنکھیں
دستِ ساقی، کبھی بوتل، کبھی ساغر ناچا


Saghar Siddiqui Famous Poetry - Saghar Siddiqui
Saghar Siddiqui Poetry


پھر تیرے بعد زندگانی کو
ہم بھی ساغر کی طرح روندیں گے


Saghar Siddiqui Famous Poetry - Saghar Siddiqui
Saghar Siddiqui Poetry


میں نے کتنی غزلوں کو ترے نام سے منسوب کیا ساغر
میری خواہش تھی بھرے شہر میں اک تو ہی چمکے


Saghar Siddiqui Ki Shayari



Khaak udti hay teri galiyon mein
Zindagi ka waqar dekha hay

خاک اڑتی ہے تیری گلیوں میں زندگی کا وقار دیکھا ہے


Taqdeer k chahry ki shikan dekh raha hon
Aina e halat hay duniya teri kiya hay

تقدیر کے چہرے کی شکن دیکھ رہا ہوں
آئینہِ حالات ہے دنیا تیری کیا ہے


saghar siddiqui sad Poetry In Urdu



Jhilmilaty howy ashkon ki ladi tuut gayi
Jagmagati howi barsat ne dam tod diya

جھلملاتے ہوئے اشکوں کی لڑی ٹوٹ گئی
جگمگاتی ہوئی برسات نے دم توڑ دیا


Ab na aenge ruthny waaly
Dida e ashk bar chup ho ja

اب نہ آئیں گے روٹھنے والے دیدارِ اشکبار چپ ہو جا


Rang udny laga hay phoolon ka
Ab to aa jao- waqt nazuk hay

رنگ اڑنے لگا ہے پھولوں کا اب تو آ جاؤ وقت نازک ہے


Chalky hwe thy jaam pareshan thi zulf e yaar
Kuch aisy hadsat se ghabra k pi gaya

چھلکے ہوئے تھے جام پریشان تھی زُلفِ یار
کچھ ایسے حادثات سے گھبرا کے پی گیا


Gham k mujrim khushi k mujrim hain
Log ab zindagi k mujrim hain

غم کے مجرم خوشی کے مجرم ہیں
لوگ اب زندگی کے مجرم ہیں


Jab jaam diya tha saaqi ne jab daur chala tha mahfil mein
Ek hosh ki saat kiya kahiye kuch yaad rahi kuch bhool gaye

جب جام دیا تھا ساقی نے جب دور چلا تھا محفل میں
اِک ہوش کی ساعت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کچھ بھول گئے


Tum gaye raunaq e bahar gayi
Tum na jao bahar k din hain

تم گئے رونقِ بہار گئی تم نہ جاؤ بہار کے دن ہیں


Sad Urdu Poetry Saghar Siddiqui



Naghmon ki ibtida thi kabhi mery naam se
Ashkon ki intiha hon mujhy yaad kijiye

نغموں کی ابتدا تھی کبھی میرے نام سے
اشکوں کی انتہا ہوں مجھے یاد کیجیے


Jis se afsana e hasti me tasalsul tha kabhi
Un mohabbat ki riwayat ne dam tod diya

جس سے افسانہِ ہستی میں تسلسُل تھا کبھی
ان محبت کی روایات نے دم توڑ دیا


Be sakhta bikhar gai jalwon ki kaenat
Aina toot kar teri angdai ban gaya

بے ساختہ بکھر گئی جلووں کی کائنات
آئینہ ٹوٹ کر تیری انگڑائی بن گیا


Main ne jin k liye rahon me bichaya tha lahu
Ham se kahty hain wahi ahd e wafa yaad nahi

میں نے جن کے لیے راہوں میں بچھایا تھا لہو
ہم سے کہتے ہیں وہی عہدِ وفا یاد نہیں


Aay adam k musafiro hoshiyar
Raah me zindagi khadi hogi

اے عدم کے مسافرو ہوشیار
راہ میں زندگی کھڑی ہو گی


Jis ahd me lut jay faqiron ki kamai
Us ahd k sultan se kuch bhool howi hay

جس عہد میں لٹ جائے فقیروں کی کمائی
اس عہد کے سلطان سے کچھ بھول ہوئی ہے


Log kahty hain raat beet chuki
Mujhko samjho main sharabi hon

لوگ کہتے ہیں رات بیت چکی
مجھ کو سمجھاؤ میں شرابی ہوں


Kal jinhen chu nahi sakti thi farishton ki nazar
Aaj woh raunaq e bazar nazar aaty hain

کل جنہیں چھو نہیں سکتی تھی فرشتوں کی نظر
آج وہ رونقِ بازار نظر آتے ہیں


Bhuli howi sada hon mujhy yaad kijiye
Tum se kahen mila hon mujhy yaad kijiye

بھولی ہوئی صدا ہوں مجھے یاد کیجیے
تم سے کہیں ملا ہوں مجھے یاد کیجیے


Aay dil e qarar chup ho ja
Ja chuki hay bahar chup ho ja

اے دلِ بے قرار چپ ہو جا جا چکی ہے بہار چپ ہو جا


Aaj phir bujh gayi jal jal k umidon k charagh
Aaj phir taron bhari raat ne dam tod diya

آج پھر بجھ گئے جل جل کے اُمیدوں کے چراغ
آج پھر تاروں بھری رات نے دم توڑ دیا


Ab kahan aisi tabiat waaly
Chot kha kr jo dua karty thy

اب کہاں ایسی طبیعت والے
چوٹ کھا کر جو دعا کرتے تھے


Zindagi jabr e musalsal ki tarah kaati hay
Jaany kis jurm ki paai hay saza yaad nahi 

زندگی جبرِ مُسلسل کی طرح کاٹی ہے
جانے کس جُرم کی پائی ہے سزا یاد نہیں


Charagh e toor jalao bada andhera hay
Zara naqab uthao bada andhera hay

چراغِ طور جلاؤ بڑا اندھیرا ہے
ذرا نقاب اٹھاؤ بڑا اندھیرا ہے


Yeh kinaron se khelny waaly
Doob jaaen to kiya tamasha ho

یہ کناروں سے کھیلنے والے
ڈوب جائیں تو کیا تماشا ہو


Saghar Siddiqui Best Ghazal



روداد محبت کیا کہیے کچھ یاد رہی کچھ بھول گئے
دو دِن کی مُسرّت کیا کہیے کچھ یاد رہی کچھ بھول گئے
کچھ حال کے اندھے ساتھی تھے کُچھ ماضی کے عیّار سجن
احباب کی چاہت کیا کہئیے کچھ یاد رہی کچھ بھول گئے
کانٹوں سے بھرا ہے دامنِ دِل شبنم سے سُلگتی ہیں پلکیں
پھولوں کی سخاوت کیا کہئیے کچھ یاد رہی کچھ بھول گئے
اب اپنی حقیقت بھی ساغر بے ربط کہانی لگتی ہے
دنیا کی حقیقت کیا کہیے کچھ یاد رہی کچھ بھول گئے
ساغر صدیقی۔



یہ جو دیوانے سے دو چار نظر آتے ہیں
ان میں کچھ صاحبِ اسرار نظر آتے ہیں
تیری محفل کا بھرم رکھتے ہیں سو جاتے ہیں
ورنہ یہ لوگ تو بیدار نظر آتے ہیں
حشر میں کون گواہی میری دے گا ساغر
سب تمہارے ہی طرفدار نظر آتے ہیں۔




ہم اہلِ وفا حُسن کو رسوا نہیں کرتے
پردہ بھی اٹھائیں رُخ سے تو دیکھا نہیں کرتے
کر لیتے ہیں دل اپنا تصور سے ہی روشن
موسیٰ کی طرح طور پہ جایا نہیں کرتے
رکھتے ہیں جو اوروں کے لیے پیار کا جذبہ
وہ لوگ کبھی ٹوٹ کے بکھرا نہیں کرتے
کہتی ہے تو کہتی رہے مغرور یہ دنیا
ہم مڑ کے کسی شخص کو دیکھا نہیں کرتے
ہم لوگ تو مے نوش بد نام ہیں " ساغر"
پاکیزہ جو ہیں لوگ وہ کیا کیا نہیں کر


Teri nazar k isharon se kheel sakta hon
Jigar farooz shararon se kheel sakta hon
Tumhary daman e rangin ka aasra le kr
Chaman k mast nazaron se kheel sakta hon
Kesi k ahd e mohabbat ki yaad baaqi hay
Bady hasin saharon se kheel sakta hon
Maqam e hosh o khirad intiqam e wahahat hay
Junun rah guzaron se kheel sakta hon
Mujhy khizan k baguly salam karty hain
Haya farosh chanaron se kheel sakta hon
Sharab o Sher k dariya mein doob kr Saghar
Suroor o kaif k dharon se kheel sakta hon




Post a Comment

0 Comments