Sharab Poetry In Urdu | Sharabi Poetry

 Sharab Poetry



Sharab Poetry In Urdu
sharab poetry

مت کر غرور اپنے نشے پہ تو اے شراب
تجھ سے زیادہ نشہ رکھتی ہیں میرے یار کی آنکھیں


Sharab Poetry In Urdu
sharab poetry

ہم اپنے وقت پر پہنچے حضورِِ یزداں میں
زباں پہ حمد لئے___ ہاتھ میں شراب لئے


Sharab Poetry In Urdu
sharab poetry

Peeta hon jitni utni hi badhti hay tishnagi
Saaqi ne jaise pyaas mila di sharab mein

پیتا ہوں جتنی اتنی ہی بڑھتی ہے تشنگی
ساقی نے جیسے پیاس ملا دی شراب میں


Sharab Poetry In Urdu
sharab poetry

ہزار جامِ تصدق ،،، ہزار میخانے
نگاہِ یار کی لذت شراب کیا جانے


sharabi aankhen poetry
sharabi aankhen poetry

مجھ کو شاعری سِکھاتی ہیں
ہائے اُس کی شرابی آنکھیں



Pi jis qadar mily shab e mahtab me Sharab sharab poetry by ghalib


Pi jis qadar mily shab e mahtab me Sharab
As balghami mizaj ko garmi hi raas hay

پی جس قدر ملے شبِ مہتاب میں شراب
اس بلغمی مزاج کو گرمی ہی راس ہے



Ghalib chuti sharab pr ab bhi kabhi kabhi ghalib sharab poetry


Ghalib chuti sharab pr ab bhi kabhi kabhi
Peeta hon roz e abr o shab e mahtab me

غالب چھٹی شراب پر اب بھی کبھی کبھی
پیتا ہوں روزِِ ابر و شبِِ مہتاب میں




Zahid sharab peeny se kafir howa main kyon
Kiya dedh chullu paani me iman bah gaya

زاہد شراب پینے سے کافر ہوا میں کیوں
کیا ڈیڑھ چلو پانی میں ایمان بہہ گیا



Lutf e mai tujhse kiya kahun zahid
Haay kam bakht tu ne pi hi nahi

لطفِ مے تجھ سے کیا کہوں زاہد
ہائے کمبخت تو نے پی ہی نہیں



Pi kr do ghunt dekh zahid
Kiya tujh se kahun sharab kiya hay

پی کر دو گھونٹ دیکھ زاہد
کیا تجھ سے کہوں شراب کیا ہے



Tera shabab rahy ham rahen sharab rahy
Yeh daur aish ka ta daur e aftab rahy

تیرا شباب رہے ہم رہیں شراب رہے
یہ دور عیش کا تا دورِ آفتاب رہے



Dard e sar hay khumar sa mujhko
Jald le kr sharab aa saaqi

دردِ سر ہے خُمار سہ مجھ کو
جلد لے کر شراب آ ساقِی



Saaqi mujhy khumar satae hay la sharab
Marta hon tishnagi se ai zalim pila sharab

ساقی مجھے خُمار ستائے ہے لا شراب
مرتا ہوں تشنگی سے آئے ظالم پلا شراب




Saaqi mujhy sharab ki tohmat nahi pasand
Mujhko teri nigah ka ilzaam chahiye

ساقی مجھے شراب کی تہمت نہیں پسند
مجھ کو تیری نِگاہ کا اِلزام چاہیے



Mery ashk bhi hain is me ye sharab ubal na jaay
Mera jaam chune waaly tera haath jal na jaay

میرے اَشک بھی ہیں اس میں یہ شراب اُبل نہ جائے
میرا جام چُھونے والے تیرا ہاتھ جَل نہ جائے


Shabab e dard meri zindagi ki subha sahi
Piyun sharab yahan tk keh shaam ho jay

شبابِ درد میری زندگی کی صبح سہی
پیوں شراب یہاں تک کہ شام ہو جائے


Vaaiz bada maza ho agr yuun azaab ho
Dozakh me paanv haath me jam e sharab ho

واعظ بڑا مزہ ہو اگر یوں عذاب ہو
دُوزخ میں پاؤں ہاتھ میں جامِ شراب ہو


Mad hosh hi raha main jahan e kharab me
Gundhi gai thi kiya meri mitti sharab me

مدہوش ہی رہا میں جہاںِ خراب میں
گوندھی گئی تھی کیا میری مٹی شراب میں


Farab e saqi e mahfil na puchiye majruh
Sharab ek hay badly howy hain paimane

فریبِ ساقیِ محفل نہ پوچھیے مجروح
شراب اِک ہے بدلے ہوئے ہیں پیمانے



Ai zauq dekh dukhtar e raz ko na munh laga
Chutti nahi hay munh se yeh kafar lagi howi

اے ذوق دیکھ دخترِ راز کو نہ منہ لگا
چھوٹی نہیں ہے منہ سے یہ کافر لگی ہوئی


Barish sharab e arsh hay yeh soch kr adam
Barish k sab huruf ko ulta k pi gaya

بارش شرابِِ عرش ہے یہ سوچ کر عدم
بارش کے سب حروف کو الٹا کے پی گیا


Itni pi jaay keh mit jaay main aur tu keh tameez
Yaani yeh hosh ki devaar gira di jaay

اتنی پی جائے کہ مٹ جائے میں اور تو کہ تمیز
یعنی یہ ہوش کی دیوار گرا دی جائے


Kuch bhi bacha na kahny ko har baat ho gai
Aao kahin sharab piyen raat ho gayi

کچھ بھی بچا نہ کہنے کو ہر بات ہو گئی
آؤ کہیں شراب پئیں رات ہو گئی


Ab to utni bhi mayasar nahi mai khany mein
Jitni ham chood diya karty thy paimany mein

اب تو اتنی بھی میسر نہیں میخانے میں
جتنی ہم چھوڑ دیا کرتے تھے پیمانے میں



Shab ko mai khuub si pi subh ko tauba kar li
Rind k rind rahy haath se jannat na gayi 

شب کو مے خوب سی پی صبح کو توبہ کر لی
رند کے رند رہے ہاتھ سے جنت نہ گئی


Shab jo ham se howa muaaf kro
Nahi pi thi bahak gay honge

شب جو ہم سے ہوا معاف کرو
نہیں پی تھی بہک گئے ہوں گے



مجھے شراب پیلا کر بے ایمانی نہ کر ساقی
مدہوش ہی کرنا ہے تو محفل میں ذکر یار کر


میری مدہوشیاں بھی جائز تھیں
وہ تو ساری شراب جیسی تھی  



کوئی ایسی پلا ساقی شرابِِ معتبر مجھ کو
ستارا چاند بن جائے مقدر رقص میں آئے



رنگ و بوئے گلاب کہہ لوں گا موج جام شراب کہہ لوں گا
لوگ کہتے ہیں تیرا نام نہ لوں میں تجھے مہتاب کہہ لوں گا



زاہد وہ بادہ کش ہوں کہ مانگوں اگر دعا
اٹھیں ابھی شراب سے بادل بھرے ہوئے



نشہ محبت کا ہو یا شراب کا
ہوش دونوں میں کھو جاتا ہے
فرق صرف اتنا ہے
شراب سُلا دیتی ہے محبت رُولا دیتی ہے




صرف آنکھ کو خدا نے دعائے سرور دی
باقی تمہارا جسم بنا ہے شراب خود



یہ جھوٹ موٹ کے درویش پھر کہاں کُھلتے
کہ میں شراب نہ رکھتا اگر طعام کے ساتھ



(Zahid Sharab Peene De Masjid Mein Baith Kar All Shayar Poetry)

(Mirza Ghalib Poetry)

زاہد شراب پینے دے مسجد میں بیٹھ کر
یا وہ جگہ بتا ،،،،،،،،،،،،،،،، جہاں خدا نہیں

(Allama Iqbal Poetry, iqbal sharab poetry)

مسجد خدا کا گھر ہے پینے کی جگہ نہیں
کافر کے دل میں جا ،،،،،،،،، وہاں خدا نہیں

(Ahmad Faraz Poetry)

کافر کے دل سے آیا ہوں میں یہ دیکھ کر
خدا تو موجود ہے وہاں مگر اُسے پتا نہیں

(Wasi Shah poetry)

خدا تو موجود ہے دنیا میں ہر جگہ
تو جنت میں جا وہاں پینا منع نہیں

(Saqi Farooqi Poetry)

پیتا ہوں میں غمِ دنیا بھلانے کے لئے ساقی
جنت میں کیا غم ہے وہاں پینے میں مزا نہیں

(Inam Ul Haq Poetry)

شراب شراب کرتے ہو پھر پینے سے کیوں ڈرتے ہو ؟
گر خوفِ خدا ہے دل میں پھر ذِکر ہی کیوں کرتے ہو ؟



Post a Comment

0 Comments