Tanhai Poetry In Urdu | Sad Tanhai Poetry

 Tanhai Poetry



tanhai poetry
tanhai poetry

سائے کی طرح ساتھ رہا تیرا تصور
تنہائی بھی ہم نے کبھی تنہا نہ گزاری


tanhai poetry
tanhai poetry

اب تو یہ عالم ہے کہ تنہائی سے تنگ آ کر
خود ہی دروازے کی زنجیر ہلا دیتے ہیں


tanhai poetry
tanhai poetry

میری روح کو تنہائی کی زنجیر پہنا کر
وہ میرے پاس تو ہوتا ہے پر میرا نہیں ہوتا


tanhai poetry in urdu
tanhai poetry

یوں نہ کہوں کہ قسمت کی بات ہے
میری تنہائی میں تیرا بھی ہاتھ ہے


sad tanhai poetry
tanhai poetry

تنہائی کو تنہائی میں تنہا کیسے چھوڑوں
تنہائی نے تنہائی میں تنہا میرا ساتھ دیا



Raton ko bhaag aay ham apny makan se raat ki tanhai poetry



sad tanhai poetry
tanhai poetry

Tanhaiyon ko saunp k tarikiyon ka zahr
Raton ko bhaag aay ham apny makan se

تنہائیوں کو سونپ کے تاریکیوں کا زہر
راتوں کو بھاگ آئے ہم اپنے مکان سے

sad tanhai poetry
tanhai poetry

Tanhai se aati nahi din raat mujhy neend
Ya rab mera ham khwaab o ham aghosh kahan hay

تنہائی سے آتی نہیں دن رات مجھے نیند
یا رب میرا ہم خواب و ہم آغوش کہاں ہے




مر گیا تنہائی کی بانہوں میں کوئی بے مراد
تعزیت کے واسطے آئے پرندے موت پر



سخت تنہائی پسند ہوں
لوگ پاگل کہتے ہیں مجھے


تنہائی میں کرنی تو ہے اک بات کسی سے
لیکن وہ کسی وقت اکیلا نہیں ہوتا



انا کا شوق ہے یا پھر شوقِ تنہائی ہے
کہ اب اچھا لگتا ہے جب کوئی اچھا نہیں لگتا



دوری بھی بعد وصل قیامت ہے اک خلش
تنہائی دے خدا نہ کبھی قربتوں کے بعد



جب دل پہ غموں کا بوجھ بڑھ جائے
تو تنہائی میں رو لیا کرو 



جس پر زہر بھی اثر نہ کرے
تنہائی اسے بھی مار دیتی ہے



تنہائی اصل بزم ہے گوشہ نشین کی
اے دنیا تجھ سے کٹ کے بھی تنہا نہیں ہوں میں



ایک تنہائی کے سوا کچھ نہ رہا پاس
میں نے اپنے سے زیادہ چاہا تھا اپنوں کو



لوٹ آیا ہوں پھر سے اپنی اسی قید تنہائی میں
لے گیا تھا کوئی اپنی محفلوں کا لالچ دے کر



دن میں لمحات بہت ہوتے ہیں تنہائی کے مگر
شام کے وقت تعلق کی بڑی یاد آئی



عشق کے نشے میں ڈوبے تو یہ جانا ہم نے کہ
درد میں تنہائی نہیں ہوتی تنہائی میں درد ہوتا ہے



ڈال کر کندھوں پر چادر ہم اپنی تنہائی چھپا نہ سکے



میں کسی ایسی جگہ کی تلاش میں ہوں
جہاں گہری تنہائی تو ہو مگر احساسِ تنہائی نہ ہو



ذرا جلنے والوں کو خبر کر دو
تنہائی کا شہزادہ لوٹ آیا ہے محفل میں

 

اپنی تنہائی میں بہتر ہوں
مجھے ضرورت نہیں عارضی سہاروں کی



میں ہوں دل ہے تنہائی ہے
تم بھی ہوتے تو اچھا ہوتا



تنہائی کی رات میں میں نے سگریٹ جلا دی
کم بخت دھواے نے اس کی تصویر بنا دی



تجھ کو بھول کے زندہ رہنا
تنہائی کے درد کو سہنا مشکل ہے بڑا مشکل ہے



اور انسان اس وقت تنہائی پسند ہو جاتا ہے
جب لوگوں کی حقیقتیں سامنے آنے لگتی ہیں



میرے مزاج کو تنہائی راس آتی ہے
مجھے پسند ہے لوگوں سے فاصلہ رکھنا



کیا خوب سزائیں ملی ہیں مجھے محبت کی
غمِ جدائی درد رسوائی رات کی تنہائی اور الزام بے وفائی



بھیڑ میں اکیلے پن کا احساس ہوتا ہے
تیرے بن یہ حال ہے میری تنہائی کا



دل تو کرتا ہے کہ میں خرید لوں تیری تنہائی
مگر افسوس میرے پاس خود تنہائی کے سِوا کچھ نہیں



تیرے ہجر میں کٹ رہی ہے یوں تنہائی
لب خاموش ہیں دیواروں نے زباں پائی ہے



راس تنہائی بھی نہیں آتی مجھ کو
اور ہر شخص سے بیزار بھی ہوں



Ham anjuman me sb ki taraf dekhty rahy
Apni tarah se koi akela nahi mila

ہم انجمن میں سب کی طرف دیکھتے رہے
اپنی طرح سے کوئی اکیلا نہیں ملا



Sahra me aa nikly to maloom howa
Tanhai ko wusat kam pad jaati hay

صحرا میں آ نکلے تو معلوم ہوا
تنہائی کو وسعت کم پڑ جاتی ہے



Koi bhi yaqeen dil ko shaad kr nahi sakta
Rooh me utar jaye jb guman ki tanhai

کوئی بھی یقین دل کو شاد کر نہیں سکتا
روح میں اتر جائے جب گماں کی تنہائی



Simatti phailti tanhai soty jagty dard
Woh apny or mery darmiyan chood gaya

سمٹتی پھیلتی تنہائی سوتے جاگتے درد
وہ اپنے اور میرے درمیاں چھوڑ گیا



Tanhai ki dulhan apni maang sajae baithi hay
Wirani abad howi hy ujdy howy darakhton me

تنہائی کی دلہن اپنی مانگ سجائے بیٹھی ہے
ویرانی آباد ہوئی ہے اجڑے ہوئے درختوں میں



Yeh kaisa qafila hy jis me saary log tanha hain
Yeh kis barzakh me hain ham sb tumhen bhi sochna hoga

یہ کیسا قافلہ ہے جس میں سارے لوگ تنہا ہیں
یہ کس برزخ میں ہیں ہم سب تمہیں بھی سوچنا ہوگا



Zamen abad hoti ja rahi hay
Kahan jaegi tanhai hamari

زمیں آباد ہوتی جا رہی ہے کہاں جائے گی تنہائی ہماری



Dekh kabhi aa kr ye la mahdood faza
Tu bhi meri tanhai me shamil ho

دیکھ کبھی آ کر یہ لا محدود فضا
تو بھی میری تنہائی میں شامل ہو



Pukara jb mujhy tanhai ne to yaad aaya
Keh apny saath bahot mukhtasar raha hon main

پکارا جب مجھے تنہائی نے تو یاد آیا
کہ اپنے ساتھ بہت مختصر رہا ہوں میں



Shahr ki bheed me shamil hay akela pan bhi
Aaj hr zehn hay tanhai ka mara dekho

شہر کی بھیڑ میں شامل ہے اکیلا پن بھی
آج ہر ذہن ہے تنہائی کا مارا دیکھو



Kitny chahry kitni shaklen phir bhi tanhai wahi
Kon le aaya mujhy in ainon k darmiyan

کتنے چہرے کتنی شکلیں پھر بھی تنہائیوں وہی
کون لے آیا مجھے ان آئینوں کے درمیاں


Sar bulandi meri tanhai tk aa pahunchi hay
Main wahan hon keh jahan koi nahi mery siwa

سر بلندی میری تنہائی تک آ پہنچی ہے
میں وہاں ہوں کہ جہاں کوئی نہیں میرے سِوا



Udasiyan hain jo din me to shab me tanhai
Basa k dekh liya shahr e aarzu main ne

اداسیاں ہیں جو دل میں تو شب میں تنہائی
بسا کے دیکھ لیا شہرِ آرزو میں نے



Ek aag gham e tanhai ki jo saary badan me phail gai
Jb jism hi saara jalta ho phir daman e dil ko bachaen kiya

اِک آگ غمِ تنہائی کی جو سارے بدن میں پھیل گئی
جب جسم ہی سارا جلتا ہو پھر دامنِ دل کو بچائیں کیا



Tanhai ki yeh kaun si manzil hay rafiqo
Ta had e nazar ek bayaban sa kyun hay

تنہائیوں کی یہ کون سی منزل ہے رفیقو
تا حدِ نظر اِک بیابان سہ کیوں ہے



Mery wajood ko parchaiyon ne tod diya
Main ek hisar tha tanhaiyon ne tod diya

میرے وجود کو پرچھائیوں نے توڑ دیا
میں اِک حصار تھا تنہائیوں نے توڑ دیا



Darwazy pr pahra deny
Tanhai ka bhoot khada hay

دروازے پر پہرا دینے تنہائی کا بُھوت کھڑا ہے




Post a Comment

0 Comments