Udas Poetry In Urdu | Udas Poetry

Udas Poetry



Udas Poetry In Urdu | Udas Poetry
udas poetry

محبت نہ کرتے تو آج اداس نہ ہوتے
اِک چھوٹی سی خطا میری زندگی فنا کر گئی


Udas Poetry In Urdu | Udas Poetry
udas poetry

Aaj bhi sham e gham udaas na ho
Maang kr main charagh laata hon

آج بھی شامِ غم اداس نہ ہو
مانگ کر میں چراغ لاتا ہوں


Udas Poetry In Urdu | Udas Poetry
udas poetry


دیکھو نہ کتنے اداس ہیں تمہارے بنا ہم
ترس نہیں آتا تمہیں ہم کو یوں تنہا چھوڑ کر




Chand kaliyan nashat ki chun kr muddaton mahv e yas rahta hon
Tera milna khushi ki baat sahi tujhse mil kr udaas rahta hon

چند کلیاں نشاط کی چن کر مدتوں محو یاس رہتا ہوں
تیرا ملنا خوشی کی بات سہی تجھ سے مل کر اداس رہتا ہوں




Mil k bichdy to howy jitny udaas urdu udas poetry

Hijr me bhi ham udaas utny na thy
Mil k bichdy to howy jitny udaas

ہجر میں بھی ہم اداس اتنے نہ تھے
مل کے بچھڑے تو ہوئے جتنے اداس




Lamhy udaas udaas fazaen ghuti ghuti
Duniya agr hay to duniya se bach k chal

لمحے اداس اداس فضائیں گُھٹی گُھٹی
دنیا اگر یہی ہے تو دنیا سے بچ کے چل




Zindagi k udaas lamhon me udas poetry

Zindagi k udaas lamhon me
Be wafa dost yaad aaty hain

زندگی کے اداس لمحوں میں
بے وفا دوست یاد آتے ہیں



Shaam bhi thi dhuan dhuan husn bhi tha udaas udaas
Dil ko kai kahaniyan yaad si aa k rah gain

شام بھی تھی دھواں دھواں حسن بھی تھا اداس اداس
دل کو کئی کہانیاں یاد سی آ کے رہ گئیں




Jan o dil hain udaas se mery udas poetry in urdu

Jan o dil hain udaas se mery
Uth gaya kaun paas se mery

جان و دل ہیں اداس سے میرے
اٹھ گیا کون پاس سے میرے




Gham gusaro bahot udaas hon main
Aaj bahla sako to aa jao

غم گُسارو بہت اداس ہوں میں
آج بہلا سکو تو آ جاؤ




Is qadar mat udaas ho jaisy
Ye mohabbat ka akhri din hay

اس قدر مت اداس ہو جیسے
یہ محبت کا آخری دن ہے




Dewar khasta hal hay or dar udaas hay
Jb se koi gaya hay mera ghar udaas hay

دیوار خستہ حال ہے اور در اداس ہے
جب سے کوئی گیا ہے میرا گھر اداس ہے




Main khanqah e badan se udaas laut aaya
Yahan bhi chahny walon me khaak batti hay

میں خانقاہ بدن سے اداس لوٹ آیا
یہاں بھی چاہنے والوں میں خاک بٹتی ہے




Yon rooh thi adam me meri bahr e tan udaas
Ghurbat me jis tarah ho gharibul watan udaas

یوں روح تھی عدم میں میری بہرِ تن اداس
غربت میں جس طرح ہو غریب الوطن اداس




Faza udaas hay rut mizmahil hay main chup hon
Jo ho saky to chala aa kesi ki khatir tu

فضا اداس ہے رُت مضمحل ہے میں چپ ہوں
جو ہو سکے تو چلا آ کسی کی خاطر تو





Udaas aankhon se aansu nahi nikalty hain
Ye motiyon ki tarah sipiyon me palty hain

اداس آنکھوں سے آنسو نہیں نکلتے ہیں
یہ موتیوں کی طرح سیپیوں میں پلتے ہیں




Aaj to be sabab udaas hay g
Ishq hota to koi baat bhi thi

آج تو بے سبب اداس ہے جی
عشق ہوتا تو کوئی بات بھی تھی




Udaas khushk labon pr laraz rha hoga
Woh ek bosa jo ab tk meri jabin pe nahi

اداس خشک لبوں پر لرز رہا ہوگا
وہ اِک بوسہ جو اب تک میری جبیں پہ نہیں




Mujhse kahti hain wo udaas aankhein
Zindagi bhar ki sab thakan yaan hay

مجھ سے کہتی ہیں وہ اداس آنکھیں
زندگی بھر کی سب تھکن یاں ہے




Aaj bahot udaas hon
Yon koi khaas gham nahi

آج بہت اداس ہوں
یوں کوئی خاص غم نہیں




Na mila kr udaas logon se
Husn tera bikhar na jae kahin

نہ ملا کر اداس لوگوں سے
حُسن تیرا بکھر نہ جائے کہیں




Bahot udaas hain devaren unchy mahlon ki
Ye wo khandar hain keh jin me ameer rahty hain

بہت اداس ہیں دیواریں اونچے محلوں کی
یہ وہ کھنڈر ہیں جن میں امیر رہتے ہیں




Udaas shaam ki yadoon bhari sulagti hawa
Hamein phir aaj purany dayar le aai

اداس شام کی یادوں بھری سلگتی ہوا
ہمیں پھر آج پرانے دیار لے آئی




Uska chehra udaas hay Majid
Aine pr nazar gai hogi

اس کا چہرہ اداس ہے ماجد
آئینے پر نظر گئی ہوگی



مجھے الہامی محبت چاہیے
اگر میں اداس ہوں تو دل اس کا بھی کہیں نہ لگے



اداس رات اداس زندگی اداس وقت اور اداس موسم
کتنی چیزوں پہ الزام لگ جاتے ہیں اِک دل کے اداس ہونے سے



خوشیاں نصیب کرے خدا ان کو
جو ہم کو اداس رکھتے ہیں



رنگ تھے جن میں جھیلوں کے کبھی
اب وہ آنکھیں بے رنگ اداس لگتی ہیں



سیاہ رات اداس دل الجھی ہوئی زندگی تھکے ہوئے ہم



وہ جو غم سن کر بھی ہنستے اور ہنساتے تھے مرشد
ان یاروں کو ڈھونڈ لا آج دل اداس ہے بہت




محفلوں میں بیٹھ کر دوستوں کے درمیاں
گونجتی رہی ہنسی اور دل اداس تھا




میں ہوں تقسیم! شامِ ہجرت کی
میں ہوں حصہ! اداس لوگوں کا





سنو تم اداس ہو تو خوش میں بھی نہیں ہوں
پھول جو مُرجھائے گا تو خوشبو کہاں سے آئے گی

 

ہم زندگی سے ہارے لوگ احتجاجً اداس رہتے ہیں



اداس دل ہے مگر ہر کسی سے ہنس کے ملتے ہیں
یہی فن سیکھا ہے بہت کچھ کھونے کے بعد



پتا نہیں یہ کونسی بیچینی ہے میرے دل کو
جب تم بات نہیں کرتے تب بھی اداس جب بات کرتے ہو پھر بھی اداس



انسان خود اُداس ہو تو دنیا کتنی اداس لگتی ہے



میری چاہتوں کا خیال کر میں اداس ہوں مجھے کال کر



میں اداس لوگوں کو ہنسا دیتا ہوں
مجھ سے اپنے جیسے لوگ دیکھے نہیں جاتے



کاش وہ آجائے اور لڑ کر یہ کہے
ہم مر گئے ہیں کیا جو اتنا اداس رہتے ہو



اچھی لگتی ہے مجھے اس کی بس یہی عادت
اداس کر کے مجھے خود بھی خوش نہیں رہتا



شکنجے ٹوٹ گئے زخم بدحواس ہوئے
ستم کی حد ہے کہ اہلِ ستم اداس ہوئے



خدا نصیب کرے ان کو خوشیاں
جو ہم کو____ اداس رکھتے ہیں



سردیوں کی صبح اس کا اداس چہرہ دیکھا نہیں جاتا
جب تک وہ مسکرا نہ دے ہمیں چین نہیں آتا




اداس رات اور گفتگو کی آرزو
ہم کس سے کریں بات کوئی بولتا بھی نہیں



بہت اداس کر لیا تم نے ہمیں چلو اب
اٹھاؤ فون ملاؤ کال کرو بات ہم سے



قلم سے لکھ نہیں سکتا اداس دل کے افسانے
میں تجھے دل سے چاہتا ہوں تیرے دل کو خدا جانے🙏



شاید کوئی اداس ، بہت جلد مر گیا
اور مجھ کو عُمر دی گئی اس کی بچی ہوئی



مقامِ حیرت کی بات ہے نہ مرشد
ایک لڑکا بھری جوانی میں اداس رہتا ہے



تم کہاں تک کرو گے دلجوئی
میں تو اکثر اداس رہتی ہوں



اداس راہیں شکستہ آہیں میرا مقدر میرا اثاثہ
طویل کاوِش پسِ سفر ہے بہت ہی مشکل میرا خلاصہ



خالی خالی جو گھر تھا یک دم بھر گیا
اداس بیٹھا وہ شخص کل رات مر گیا



گزر تو جائے گی تیرے بغیر بھی لیکن
بڑی اداس بہت بے قرار گزرے گی
خزاں گزیدہ چمن ہوں میں مستقل سا خلِش
نہیں یقین کہ پھر سے بہار گزرے گی


دل کو تیرے دیدار کی آس رہتی ہے
ان نظروں کو تیری صورت کی پیاس رہتی ہے
میرے پاس کسی چیز کی کمی تو نہیں
مگر تیرے بغیر زندگی اداس رہتی ہے 




بہت اداس ہے کوئی تیرے چپ ہو جانے سے
ہو سکے تو بات کر کسی بہانے سے
تو لاکھ خفا سہی مگر اتنا تو دیکھ
کوئی ٹوٹ گیا ہے تیرے روٹھ جانے سے





Post a Comment

0 Comments