40+ Dhoka Poetry | Dhoka Poetry In Urdu

 Dhoka Poetry



dhokha deti hai aksar masoom chehre Ki chamak dhoka poetry


Dhoka Poetry
Dhoka Poetry


dhokha deti hai aksar masoom chehre Ki chamak
Hr kaaanch k tukde ko Hira nahin kahate

دھوکہ دیتی ہے اکثر معصوم چہرے کی چمک
ہر کانچ کے ٹکڑے کو ہیرا نہیں کہتے



Dhoka Poetry
dhoka poetry


ہم مطلبی نہیں کہ چاہنے والوں کو دھوکہ دیں
بس ہمیں سمجھنا ہر کسی کے بسکی بات نہیں


Dil ko kaise samjhaun ke dhoke baaz tha woh dhoka poetry in urdu

Dhoka Poetry
dhoka poetry


Wo masoom chehra mere zehen se nikalta hi nahin
Dil ko kaise samjhaun ke dhokebaaz tha wo

وہ معصوم چہرہ میرے ذہن سے نکلتا ہی نہیں
دل کو کیسے سمجھاؤں کہ دھوکے باز تھا وہ



Abhi kuchh log dhoka kha rahe hain dhoka poetry urdu

Dhoka Poetry
dhoka poetry


Tajub hai ki Ishq o aashiqui se
Abhi kuchh log dhokha kha rahe hain

تعجب ہے کہ عشق و عاشقی سے
ابھی کچھ لوگ دھوکا کھا رہے ہیں


dhoka poetry in urdu
dhoka poetry


Hum mauka dete rahy wo dhokha dety rahy

ہم موقع دیتے رہے وہ دھوکہ دیتے رہے


dhoka poetry in urdu
dhoka poetry


بڑا طویل صدمہ تھا ، تیرے مختصر سے دھوکے کا


dhoka poetry in urdu
dhoka poetry


دھوکے ________ کی خاصیت ہے کہ
دینے والا اکثر کوئی خاص ہی ہوتا ہے


Humne kirdar ki azmat ko kabhi girne nahin diya
Dhokhe to bahut khae per kabhi dhokha nahin diya

ہم نے کردار کی عظمت کو کبھی گرنے نہیں دیا
دھوکے تو بہت کھائے پر کبھی دھوکہ نہیں دیا




Bahut se aabe sahi mujh mein mgr aik khobi bhi hai
Ham dil se jise chahein use dhokha nahin dety

بہت سے عیب سہی مجھ میں مگر ایک خوبی بھی ہے
ہم دل سے جسے چاہیں اسے دھوکہ نہیں دیتے



مطمعین اس لیے بھی ہوں دھوکہ کھایا ہے دیا نہیں



نہ چاہو تو بھی مل ہی جاتا ہے
دنیا میں دھوکہ عروج پر ہے۔۔۔




صرف دھوکہ ہی دے سکا وہ
آخر اس کی اوقات ہی اتنی تھی



دھوکا دینا تو محبت والوں کی رسمِ وفا ہے مُرشد
پھول خوشبو کے لئے ہوتے تو لوگ جنازے پہ نہ ڈالتے




Baht dhokha milta hai un logon ko
Jo Dil ke saaf hote hain

بہت دھوکا ملتا ہے ان لوگوں کو
جو دل کے صاف ہوتے ہیں



سنو یہ پیار محبت سب دھوکا ہے
میری طرح معصوم بن جاؤ ابھی بھی موقع ہے




خوبصورتی سے دھوکا نہ کھانا ہے اے ابنِ آدم
تلوار کتنی بھی خوبصورت ہو مانگتی تو خون ہے



دھوکا ہے اِک فریب ہے منزل کا ہر خیال
سچ پوچھیے تو سارا سفر واپسی کا ہے



Deewangi Ka sitam to dekho ke dhokha milane ke bad bhi chahte Hain Ham un  ko

دیوانگی کا ستم تو دیکھو
کہ دھوکا ملنے کے بعد بھی چاہتے ہیں ہم ان کو




Mujh par Haq tumne us-din kho diya tha
jis din Tum Ne mujhe dhoka diya tha


مجھ پر حق تم نے اس دن کھو دیا تھا
جس دن تم نے مجھے دھوکہ دیا تھا




Yakin tha ki tum dhokha Doge mujhe Khushi hai Ki Tum ummid per khare utre

یقین تھا کہ تم دھوکا دو گے مجھے
خوشی ہے کہ تم امید پر کھرے  اُترے 




Hm use yaad bahot aayengy
Jb use bhi koi dhoka dega

ہم اسے یاد بہت آئیں گے
جب اسے بھی کوئی دھوکہ دے گا




Sachy dil jb milty hain
To dhoky ka wajood nahi chodty

سچے دل جب ملتے ہیں
تو دھوکے کا وجود نہیں چھوڑتے




Pehly ishq phir dhokha phir be_wafai
Badi tarkeeb se ik ishq ne tabaah kr diya

پہلے عشق پھر دھوکہ پھر بے وفائی
بڑی ترکیب سے اِک عشق نے تباہ کر دیا




Tumhara pyar ba sahi per tumhare dhokhe Ne mujhe bahut himmat dii hay

تمہارا پیار نہ سہی
پر تمہارے دھوکے نے مجھے بہت ہمت دی ہے




Jb dhokha hi tha tumhari mohabbat
To jhooth apny labon ko kahany dety

جب دھوکا ہی تھا تمہاری محبت
تو جھوٹ اپنے لبُوں کو کہنے دیتے




Aashiqui Ki had to dekho
Dhokha milane ke bavjud bhi hmm unpe marte hain

عاشقی کی حد تو دیکھو
دھوکا ملنے کے باوجود بھی ہم اُن پہ مرتے ہیں




Kis ne wafa ke naam par dhokha diya mujhe
Kis se kahun ke mera gunagaar kaun hai

کس نے وفا کے نام پہ دھوکا دیا مجھے
کس سے کہوں کہ میرا گُناہ گار کون ہے



Zakham lagakar uska bhi kuchh hath khula
Mein bhi dhokha khakar kuchh chalak hua

زخم لگا کر اس کا بھی کچھ ہاتھ کھلا
میں بھی دھوکا کھا کر کچھ چالاک ہوا




Dard itna tha zindagi mein ke dhadkan sath dene se ghabra gai
Aankhen band thin kisi ki yaad mein aur maut dhokha kha gai

درد اتنا تھا زندگی میں کہ دھڑکن ساتھ دینے سے گھبرا گئی
آنکھیں بند تھیں کسی کی یاد میں اور مُوت دھوکا کھا گئی



Dhokhebaaz kai roop nein aate hain
Kabhi pyar bankar to kabhi dost bankar

دھوکے باز کئی رُوپ میں آتے ہیں
کبھی پیار بن کر تو کبھی دوست بن کر



Mohabbat karke dekhi hai
Mohabbat saaf dhokha hai
Yah sab kahane ki baten hain
Kaun kisi ka hota hai

محبت کر کے دیکھی ہے
محبت صاف دھوکا ہے
یہ سب کہنے کی باتیں ہیں
کون کسی کا ہوتا ہے




Kambakht dil ko agr ishq mein lagao ge
likhkar lelo dhokha jarur paoge

کمبخت دل کو اگر عشق میں لگاؤ گے
لکھ کے لے لو دھوکا ضرور پاؤ گے




Dhokha dekar aise chale gaye
Jaise kabhi jante hi nahin thy

دھوکا دے کر ایسے چلے گئے
جیسے کبھی جانتے ہی نہیں تھے



Dil tu pahli bar hi tuut gaya tha
Bad mein to is ne zid kar li thi dhokha khane ki

دل تو پہلی بار ہی ٹوٹ گیا تھا
بعد میں تو اس نے ضد کر لی تھی دھوکہ کھانے کی




زمانہ وفادار نہیں تو کیا ہوا اے دل
دھوکے باز بھی تو اکثر یار ہی ہوا کرتے ہیں




دھوکا دینے کے ہزار طریقے ہیں لیکن
سب سے گھٹیا محبت اور ہمدردی کا دکھاوا کرنا ہے




تنہائی ہی بہتر ہے جھوٹے دھوکے باز ٹائم پاس منافق اور بد ذات لوگوں سے




جھوٹا مکار اور دھوکے باز ہوں میں
تیری تو اُٹھ بیٹھ ہے فرشتوں میں




نفرتیں بہتر ہیں اس دھوکے سے
جسے لوگ محبت کہتے ہیں



اِک لائن اس انسان کے لئے جس نے آپ کو دھوکہ دیا





تیرے لیے سب چھوڑ کے ، تیری نہ رہی میں
دنیا بھی گئی عشق میں ، تجھ سے بھی گئی میں

اِک سوچ میں گُم ہوں میں ، تیری دیوار سے لگ کر
منزل پر پہنچ کر بھی ، ٹھکانے نہ لگی میں

میں تیز ہوا میں بھی بگولے کی طرح تھی
آیا تھا مجھے طیش مگر ، جھوم اٹھی میں

اس درجہ مجھے کھوکھلا کر رکھا تھا غم نے
لگتا تھا کہ اب کے، گئی اب کے گئی میں

اِک دھوکے میں دنیا نے میری رائے طلب کی
کہتے تھے کہ پتھر ہوں ، مگر بول پڑی میں

 


دھوکے کے بعد چائے وہ دوسری چیز ہے
جو بندے کی آنکھیں کھول دیتی ہے 🤓





یہ دنیا صرف دھوکا ہے ، جو بے حیا کو خوبصورت،
دھوکے باز کو عقلمند اور ایماندار کو بےوقوف سمجھتی ہے۔



مرد نے جب بھی قلم اٹھایا عورت کو نرم و نازک حسین اور خوبصورت لکھا
لیکن عورت نے جب بھی لکھا مرد کو ہمیشہ دھوکے باز فریبی مکار اور ظالم لکھا




Post a Comment

0 Comments