Aag Poetry



aag poetry
aag poetry


Zaroori nahi ke log aag se jalen murshid
Kuchh log hamare andaaz se jal jaate hain

ضروری نہیں کہ لوگ آگ سے جلیں مرشد
کچھ لوگ ہمارے انداز سے جل جاتے ہیں


aag poetry
aag poetry


Kabhi gham ki aag mein jal uthe kabhi daagh e dil ne jala diya
Aay junoon e ishq bata zara mujhe kyon tamasha banaa diya

کبھی غم کی آگ میں جل اٹھے کبھی داغِ دل نے جلا دیا
اے جنوںِ عشق بتا ذرا مجھے کیوں تماشا بنا دیا


ishq ki aag poetry
ishq ki aag poetry


Bheeg jaane do in barishon ki bundon mein hamen
Keh is ishq ki aag mein ham bahut jal chuke hain

بھیگ جانے دو ان بارشوں کی بوندوں میں ہمیں
کہ اس عشق کی آگ میں ہم بہت جل چکے ہیں


aag poetry
aag poetry


Koi sath na de mera chalna mujhe aata hai
Har aag se wakif hun jalana mujhe aata hai

کوئی ساتھ نہ دے میرا چلنا مجھے آتا ہے
ہر آگ سے میں واقف ہوں جلانا مجھے آتا ہے


لگے گی آگ تو آئینگے گھر کئی زد میں
یہاں پر صرف ہمارا مکان تھوڑی ہے

میں جانتا ہوں کے دشمن بھی کم نہیں
لیکن ہماری طرح ہتھیلی پر جان تھوڑی ہے

جو آج صاحبِ مسند ہیں کل نہیں ہوں گے
کرائے دار ہیں ذاتی مکان تھوڑی ہے
راحت اندوری


Post a Comment

Previous Post Next Post