Aitbar Poetry



aitbar poetry


Aitbar nahin aata to aazma kar dekh le
Ham tere chahane walon mein aval aaenge

اعتبار نہیں آتا تو آزما کر دیکھ لے
ہم ترے چاہنے والوں میں اوّل آئینگے


aitbar poetry


Aitbaar kijiye sirf andhon ka
Jinon ne rang birangi duniya nahin dekhi

اعتبار کیجئے صرف اندھوں کا
جنہوں نے رنگ پرنگی دنیا نہیں دیکھی


aitbar poetry


Sirf aitbar de gal ay murshid
Har koi yaar nahin hundda

صرف اعتبار دی گل اے مرشد
ہر کوئی یار نئیں ہوندا


aitbar poetry


Bahut zor se hansa mein badi muddat k bad
Phir kisi ne aaj kaha mera aitbar kijiye

بہت زور سے ہنسا میں بڑی مدتوں کے بعد
پھر کسی نے آج کہا میرا اعتبار کیجئے


aitbar poetry


Sahar ko khog chiragon per anusar na kar
Hawa se dosti rakh uska aitbaar na kar

سحر کو کھوج چراغوں پہ انحصار نہ کر
ہوا سے دوستی رکھ اس کا اعتبار نہ کر


aitbar poetry


Koi nahin hai yahan aitbaar ke kabil
Kisi ko raaz bataaoge mare jaaoge

کوئی نہیں ہے یہاں اعتبار کے قابل
کسی کو راز بتاؤ گے مارے جاؤ گے


aitbar poetry


Koi vada nahin fir bhi intezar tha tera

Door hone par bhi aitbaar tha tera

Na jaane kyon berukhi ki tum ne humse

Kya koi humse jyada bhi talabgaar tha tera


کوئی وعدہ نہیں پھر بھی انتظار تھا تیرا

دور ہونے پر بھی اعتبار تھا تیرا

نہ جانے کیوں بے رُخی کی تم نے ہم سے

کیا کوئی ہم سے زیادہ بھی طلبگار تھا تیرا




Kabhi aitbar e ulfat kabhi humse badgumani

Teri ye bhi meharbani teri wo bhi meharbani


کبھی اعتبارِ اُلفت کبھی ہم سے بدگمانی

تیری یہ بھی مہربانی تیری وہ بھی مہربانی




Jo aitbaar ke qabil na tha ham usko apna raaz bata baithe


جو اعتبار کے قابل نہ تھا ہم اُسکو اپنے راز بتا بیٹھے




Use kisi ki mohabbat ka aitbaar nahin

Use shayad zamane ne bahut sataya hai


اسے کسی کی محبت کا اعتبار نہیں

اسے شاید زمانے نے بہت ستایا ہے




Tere badalne ka dukh nahin hai jaani

Main apne aitbaar par sharminda hun


تیرے بدلنے کا دکھ نہیں ہے جانی

میں اپنے اعتبار پر شرمندہ ہوں




Tod kar jod lo chahe duniya ki har cheez

Sab kuch kabil e muramat hay ek aitbaar k siva


توڑ کر جوڑ لو چاہے دنیا کی ہر چیز

سب کچھ قابلِ مرمت ہے اِک اعتبار کے سوا




Ya pass rakh ya door ja ya aitbar kar ya bhool ja


یا پاس رکھ یا دور جا یا اعتبار کر یا بھول جا




Aitbaar soch kar karna murshid

Mumkin nahin har jagah hi main milun aapko


اعتبار سوچ کر کرنا مرشد

ممکن نہیں ہر جگہ ہی میں مِلوں آپ کو




Har shakhs to fareeb nahin deta

Magar chhodo ab aitbar zeeb nahin deta


ہر شخص تو فریب نہیں دیتا

مگر چھوڑو اب اعتبار زیب نہیں دیتا




Ab kisi rishte ka aitbaar nahin raha

Sab se milunga sab k andaaz se


اب کسی رشتے کا اعتبار نہیں رہا

سب سے ملونگا سب کے انداز سے




Badshahat ka aitbaar hai kya

Ahtiyatan fakeer rahta hun


بادشاہت کا اعتبار ہے کیا

احتیاطً فقیر رہتا ہوں





Post a Comment

Previous Post Next Post