Bachpan Poetry



bachpan poetry


Hamto bachpan me bhi akele thy
Sirf dil ki gali me khele thy

ہم تو بچپن میں بھی اکیلے تھے
صرف دل کی گلی میں کھیلے تھے


bachpan poetry



bachpan poetry


Udne do parindon ko abhi shokh hawa me
Phir laut kr bachpan k zamane nahi aaty

اُڑنے دو پرندوں کو ابھی شوخ ھوا میں
پھر لوٹ کر بچپن کے زمانے نہیں آتے


bachpan poetry


Bachpan wale khilone poochh rahe hain
Keh kaisa lagta hai jab koi khelta hay to

بچپن والے کھیلونے پوچھ رہے ہیں
کہ کیسا لگتا ہے جب کوئی کھیلتا ہے تو


bachpan poetry


Bachpan ki wo ameeri na jaane kahan kho gai
Jab barish ke pani mein hamare bhi jahaz chala karte thy

بچپن کی وہ امیری نہ جانے کہاں کھو گئی
جب بارش کے پانی میں ہمارے بھی جہاز چلا کرتے تھے


bachpan poetry


Bachpan ke kheel khatm hote hain to
Naseeb ke kheel shro ho jaate hain

بچپن کے کھیل ختم ہوتے ہیں تو
نصیب کے کھیل شروع ہو جاتے ہیں


bachpan poetry


Kash laut jaun main apni bachpan ki duniya mein
Jismein na kuch zarurat thi na koi zaruri tha

کاش لوٹ جاؤ میں اپنی بچپن کی دنیا میں
جس میں نہ کچھ ضرورت تھی نہ کوئی ضروری تھا


bachpan poetry


Zindagi ki kitaab mein sabse achcha page bachpan ka hota hay

زندگی کی کتاب میں سب سے اچھا پیج بچپن کا ہوتا ہے




Mery rony ka jiss me qissa hay
Umar ka behtreen hissa hay

میرے رونے کا جس میں قصہ ھے
عمر کا بہترین حصہ ھے




Mera bachpan bhi saath le aaya
Gaanv se jab bhi a gaya koi

میرا بچپن بھی ساتھ لے آیا
گاؤں سے جب بھی آ گیا کوئی 




Badi hasrat se insaan bachpane ko yaad krta hay
Ye phal pak kr dobara chahta hay khaam ho jae

بڑی حسرت سے انسان بچپنے کو یاد کرتا ھے
یہ پھل پک کر دوبارہ چاہتا ھے کھام ہو جائے




Main bachpan me khilaune todta tha
Mery anjaam ki wo ibtida thi

میں بچپن میں کھلونے توڑتا تھا
میرے انجام کی وہ ابتدا تھی




Bachpan me ham hi thy ya tha koi aur
Wahshat si hony lagti hay yaadon se

بچپن میں ہم ہی تھے یا تھا کوئی اور
وحشت سی ہونے لگتی ھے یادوں سے




Asir e panja e ahd e shabab kr k mujhy
Kahan gaya mera bachpan khraab kr k mujhy

اسیرِ پنجہِ عہدِ شباب کر کے مجھے
کہاں گیا میرا بچپن خراب کرکے مجھے




Abtak hamari umar ka bachpan nahi gaya
Ghar se chaly thy jeb k paise gira diye

اب تک ھماری عمر کا بچپن نہیں گیا
گھر سے چلے تھے جیب کے پیسے گرا دیے




Fikr e maash kha gai ahd e shabab ko
Bachpan gujarte hi budhape ne a lia

فکرِ معاش کھا گئی عہدِ شباب کو
بچپن گزارتے ہی بڑھاپے نے آ لیا




Main jawani mein yuun kharab na hota
Tum bachpan mein agar mar gai hoti

میں جوانی میں یوں خراب نہ ہوتا
تم بچپن میں اگر مر گئی ہوتی



Ajeeb jaldi thi bachpan mein kab bade honge
Bade hoaye hain to ji chahta hay bachpan ho

عجیب جلدی تھی بچپن میں کب بڑے ہوں گے
بڑے ہوئے ہیں تو جی چاہتا ہے بچپن ہو




Ye daulat bhi lelo ye shohrat bhi lelo
Bhale cheen lo mujhse ye meri jawani
Magar mujhko lauta do bachpan ka sawan
Wo kagaz ki kashti wo barish ka pani

یہ دولت بھی لے لو یہ شہرت بھی لے لو
بھلے چھین لو مجھ سے یہ میری جوانی
مگر مجھ کو لوٹا دو بچپن کا ساون
وہ کاغذ کی کشتی وہ بارش کا پانی



Humne rakha tha bachpan se dil ko saaf
Aaj pata chala qeemat dilon ki nahi chehron ki hoti hay

ہم نے رکھا تھا بچپن سے دل کو صاف
آج پتہ چلا قیمت دلوں کی نہیں چہروں کی ہوتی ھے





Post a Comment

Previous Post Next Post