Faiz Ahmed Faiz Poetry In Urdu



faiz ahmed faiz poetry


Wo aa rahy hain wo aaty hain aa rahy honge
Shab e firaaq ye kah kr guzar di hamne

وہ آرہے ہیں وہ آتے ہیں آرہے ہوں گے
شبِ فراق یہ کہہ کر گزار دی ہم نے


faiz ahmed faiz poetry


Aay to yuun k jaise hamesha thy mehrban
Bhuly to yuun k goya kabhi aashna na thy

آئے تو یوں کہ جیسے ہمیشہ تھے مہربان
بُھولے تو یوں کہ گویا کبھی آشنا نہ تھے


faiz ahmed faiz poetry in urdu


Kr rha tha gham e jahan ka hisaab

Aaj tum yaad be hisaab aay


کر رہا تھا غمِ جہاں کا حساب

آج تم یاد بے حساب آئے




Dono jahan teri mohabbat me haar k

Wo ja rha hay koi shab e gham guzar k


دونوں جہان تیری محبت میں ہار کے

وہ جا رہا ہے کوئی شبِ غم گزار کے




Wo baat saare fasane me jiska zikr na tha

Wo baat unko bahot na gavar guzri hay


وہ بات سارے فسانے میں جس کا ذکر نہ تھا

وہ بات ان کو بہت ناگوار گزری ھے




Gulon me rang bhare bad e nau bahar chaly

Chaly bhi aao k gulshan ka karobar chaly


گلوں میں رنگ بھرے باد نوبہار چلے

چلے بھی آؤ کہ گلشن کا کاروبار چلے




Maqam faiz koi raah me jacha hi nahi

Jo ku e yaar se nikly to su e dar chaly


مقام فیض کوئی راہ میں جچا ہی نہیں

جو کوئے یار سے نکلے تو سوئے دار چلے




Tere qaul o qarar se pahly

Apne kuch ur bhi sahary thy


تیرے قول و قرار سے پہلے

اپنے کچھ اور بھی سہارے تھے




Uth kr to aa gaye hain teri bazam se magr

Kuch dil hi janta hay k kis dil se aay hain


اٹھ کر تو آگئے ہیں تیری بزم سے مگر

کچھ دل ہی جانتا ھے کہ کس دل سے آئے ھیں




Ye daagh daagh ujala ye shab gazida sahar

Wo intezar tha jiska ye wo sahar to nahi


یہ داغ داغ اُجالا یہ شبِ گزیدہ سحر

وہ انتظار تھا جس کا یہ وہ سحر تو نہیں




Ada e husn ki maasumiyat ko kam kr de

Gunahgar e nazar ko hijaab aata hay


اداِ حسن کی معصومیت کو کم کر دے

گناہ گار نظر کو حجاب آتا ھے




Yuun saja chand k jhalka tery andaaz ka rang

Yuun faza mahki k badla mery hamraz ka rang


یوں سجا چاند کہ جھلکا تیرے انداز کا رنگ

یوں فضا مہکی کہ بدلا میرے ہمراز کا رنگ




Chaman pe gharat e gul chin se jaany kiya guzri

Qafas se aaj saba be qarar guzri hay


چمن پہ غارتِ گلچیں سے جانے کیا گزری

قفس سے آج صبا بے قرار گزری ھے




Aur bhi dukh hain zamane me mohabbat k siwa

Rahatein aur bhi hain vasl ki rahat k siwa


اور بھی دکھ ہیں زمانے میں محبت کے سوا

راحتیں اور بھی ہیں وصل کی راحت کے سوا





Post a Comment

Previous Post Next Post