Mir Taqi Mir Poetry



Mir Taqi Mir (Born: 28 May 1723; Died: 22 September 1810) Mir Muhammad Taqi was a great Urdu poet. Mir was his nickname. Mir Taqi Mir has a very high position in Urdu poetry. He was a unique poet of his time.
Mir Taqi Mir was born in 1723 in Agra. His father's name was Muhammad Ali but Ali was known as Muttaqi.
 Finally, this harem of Iqlim Sokhan, the king, at the age of 87, fell asleep in the arms of Lucknow in 1810.



mir taqi mir poetry


Gul ho mahtab ho aina ho khurshid ho mir
Apna mahboob wahi hay jo ada rakhta ho

گل ہو مہتاب ہو آئینہ ہو خورشید ہو میر
اپنا محبوب وہی ہے ___ جو ادا رکھتا ہو


mir taqi mir poetry


Yaad uski itni khuub nahi mir baaz aa
Nadan phir wo ji se bhulaya na jayega

یاد اس کی اتنی خوب نہیں میر باز آ
نادان پھر وہ جی سے بھلایا نہ جائیگا


mir taqi mir poetry


Hoga kesi diwar k saae me pada mir
kiya kaam mohabbat se us aaram talab ko

ہوگا کسی دیوار کے سائے میں پڑا میر
کیا کام محبت سے اس آرام طلب کو


mir taqi mir poetry


Mere rone ki haqeeqat jismein thi
Ek muddat tak wo kaghaz nam raha

میرے رونے کی حقیقت جس میں تھی
ایک مدت تک وہ کاغذ نم رہا


mir taqi mir poetry


Yuun uthe aah us gali se ham
Jaise koi jahan se uthata hay

یوں اٹھے آہ! اس گلی سے ہم
جیسے کوئی جہاں سے اٹھتا ھے


mir taqi mir poetry


Umar gujari dawain karte mir
Dard e dil ka hua na chara hanooz

عمر گزری دوائیں کرتے میر
دردِ دل کا ہوا نہ چارہ ہنوز


mir taqi mir poetry


Mir bandhu se kam kab nikala
Mangna hay jo kuchh khuda se mang

میر بندوں سے کام کب نکلا
مانگنا ہے جو کچھ خدا سے مانگ


meer taqi meer poetry


Ham hue tum hue k Mir hue
Uski zulfon k sab aseer hue

ہم ہوئے تم ہوئے کہ میر ہوئے
اس کی زلفوں کے سب اسیر ہوئے


meer taqi meer poetry


Wo aaye bazm mein itna to humne dekha mir
Uske baad chiragon mein roshni na rahi

وہ آئے بزم میں اتنا تو ہم نے دیکھا میر
اس کے بعد چراغوں میں روشنی نہ رہی


meer taqi meer poetry


Alam aaina hay jiska wo musawwir bemisal
Hay kiya suratein parde mein banata hai miyan

عالم آئینہ ھے جس کا وہ مصور بے مثل
ہائے کیا صورتیں پردے میں بناتا ہے میاں


meer taqi meer poetry


Nazuki uske lab ki kiya kahiye
Pankhudi ek gulaab ki si hay

نازکی اس کے لب کی کیا کہیے
پنکھڑی اِک گلاب کی سی ہے


meer taqi meer poetry


Ishq ek mir bhari patthar hay
Kab ye tujh na tavan se uthta hay

عشق اِک میر بھاری پتھر ھے
کب یہ تجھ ناتواں سے اٹھتا ھے


meer taqi meer poetry


Pata pata buuta buuta haal hamara jaane hay
Jaane na jaane gul hi na jaane baagh to saara jaane hay

پتا پتا بوٹا بوٹا حال ہمارا جانے ھے
جانے نہ جانے گل ہی نہ جانے باغ تو سارا جانے ھے


mir taqi mir poetry images


Rote phirte hain saari saari raat
Ab yahi rozgar hay apna
 
روتے پھرتے ہیں ساری ساری رات
اب یہی روزگار ہے اپنا


mir taqi mir poetry in urdu


Kiya kahun tumse main keh kiya hay ishq
Jaan ka rog hay bala hay ishq

کیا کہوں تم سے میں کہ کیا ہے عشق
جان کا روگ ہے بلا ہے عشق


mir taqi mir


Meer un neem baaz aankhon mein
Saari masti sharaab ki si hay

میر ان نیم باز آنکھوں میں
ساری مستی شراب کی سی ہے




Ulti ho gain sb tadbiren kuch na dava ne kaam kiya
Dekha is bimari e dil ne aakhir kaam tamam kiya

الٹی ہو گئیں سب تدبیریں کچھ نہ دوا نے کام کیا
دیکھا اس بیماریِ دل نے آخر کام تمام کیا




Bulbul ghazal saraai aage hamare mat kar
Sab ham se seekhte hain andaaz e guftgu ka

بلبل غزل سرائی آگے ہمارے مت کر
سب ہم سے سیکھتے ہیں اندازِ گفتگو کا




Phirte hain mir khvaar koi puchta nahi
Is aashiqi me izzat e sadat bhi gayi
پھرتے ہیں میر خوار کوئی پوچھتا نہیں
اس عاشقی میں عزت سادات بھی گئی

 

Kaam the ishq mein bahut per mir
Ham hi fargh hue shatabi se
کام تھے عشق میں بہت پر میر
ہم ہی فارغ ہوئے شتابی سے



منہ کھولے تو روز ہے روشن زلف بکھیرے رات ہے
پھر ان طوروِں سے عاشق کیوں کر صبح کو اپنی شام کریں





Post a Comment

Previous Post Next Post