Best Heart Touching Poetry In Urdu 2 Lines Sms

 Heart Touching Poetry


Heart touching poetry in Urdu these poetry directly touch your heart and make your heart melt, Your emotion & feeling without saying any thing, send this poetry to your love one & realize your feeling with out saying anything, shayari make your partnar heart melt so lets get started, If you want to read or see more poetry then visit our website other pages related to shayari, Where you can get heart touching poetry in Urdu text, The poetry that is being shared with you in this post is based on the heart, There is same poetry about sadness & same about love, We hope u enjoy this collection of poetry that is built on the heart touching & you will definitely, heart touching poetry.





Kunddan hue hain aag bhi apni laga k ham
Ham pr ksi sunaar ki marzi nahi chali

کُندن ہوئے ہیں آگ بھی اپنی لگا کے ہم
ہم پر کسی سُنار کی مرضی نہیں چلی




Mukmmal todkar aay sabar ki talqeen karte shakhs
Hamari chup nahin banti hamara shor banta hai

مکمل توڑ کر آئے صبر کی تلقین کرتے شخص
ہماری چُپ نہیں بنتی ہمہارا شور بنتا ہے




Kabhi kitabon mein phool rakhna kabhi drakhton pe naam likhna
Hamen bhi hai yaad aaj tak wo najar se harf salam likhna

کبھی کتابوں میں پھول رکھنا کبھی درختوں پے نام لکھنا
ہمیں بھی ھے یاد آج تک وہ نظر سے حرف سلام لکھنا




Yon nahin saman purane pe nazar ja thahri
Phir se tum band lifafon se nikal aaye ho

یونہی سامان پرانے پہ نظر جا ٹھہری
پھر سے تم بند لفافوں سے نکل آئے ہو 




Pagalpan ki sari lakeere mere hath mein kyon
Jisko chahun main hi chahun mein hi chahun kyon

پاگل پن کی ساری لکیریں میرے ہاتھ میں کیوں
جسکو چاہوں میں ہی چاہوں میں ہی چاہوں کیوں




Khulos e ishq kabhi raiega nahi jata
Main kese maan lon tujhy mera khayal nahi aata

خلوصِ عشق کبھی رائیگاں نہیں جاتا
میں کیسے مان لوں تجھے میرا خیال نہیں آتا




Ab koi ishara hai na paigam na aahat
Baam o dar o deewar badi der se chup hain

اَب کوئی اشارہ ھے نہ پیغام نہ آہٹ
بام و در و دیوار بڑی دیر سے چپ ہیں




Main majzoob e ishq aisa siah bhakt hun
Ke mera sytamgar mera nabz shanas nikala

میں مجزوبِ عشق ایسا سیاہ بخت ھوں
کہ میرا ستمگر ہی میرا نبض شناس نکلا




Na mizaaj faiz poochu kuch ajeeb kaifyat hay
Abhi hans raha tha pagal abhi ro diya bechara

نہ مزاج فیض پوچھو کچھ عجیب کیفیت ہے
ابھی ہنس رہا تھا پاگل بھی رُو دیا بیچارا




Jab ham kesi shakhs ko sakoon samjhnay lagty hain
Tu yaqeen janain tab se be sakooni shuru hoti hay

جب ہم کسی شخص کو سکون سمجھنے لگتے ہیں
تب سے بے سکونی شروع ھوتی ھے



Taskin e mohabbat ke bus do hi tarike the
Ya dil na banaa hota ya tum na bane hote

تسکینِ محبت کے بس دو ہی طریقے تھے
یا دل نہ بنا ہوتا یا تم نہ بنے ہوتے



Aaj to besabab ji udaas hai
Ishq hota to koi baat bhi thi

آج تو بے سبب جی اُداس ھے
عشق ھوتا تو کوئی بات بھی تھی



Bata hamen bhi kabhi aay dar badri
Kisi ki aankh se nikale hue kahan jaen

بتا ہمیں بھی کبھی اے ملالِ دربدری
کسی کی آنکھ سے نکلے ھوئے کہاں جائیں



Seene se lago hans ke rahe yaad ye lamha
Khokar hamen rone ko to ek umr padi hai

سینے سے لگو ہنس کے رھے یاد یہ لمحہ
کھوکر ہمیں رُونے کو تو اِک عمر پڑی ھے



Is dard ki tahweel mein rahte hue hamko
Chupchap bikharna hai tamasha nahin karna

اس درد کی تحویل میں رہتے ھوئے ہمکو
چپ چاپ بکھرنا ھے تماشا نہیں کرنا



Aankh agar duub ke royi hai to thamne ki nahi
Zakham agar zakhm e tamanna hai to bharna kaisa

آنکھ اگر ڈُوب کے روئی ھے تو تھمنے کی نہیں
زخم اگر زخمِ تمنا ھے تو بھرنا کیسا



Yazdan ne muskura ke badi der mein likha
Ek lafz aarzoo mere dil ki kitaab mein

یزداں نے مُسکرا کے بڑی دیر میں لکھا
اِک لفظ آرزو میرے دل کی کتاب میں



Jo dil kabu mein ho to koi ruswa e jahan kyon ho
Khalash kyon ho tapash kyon ho qalaq kyon ho fugha kyon ho

جو دل قابو میں ہو تو کوئی رسواِ جہاں کیوں ہو
خلش کیوں ہو تپش کیوں ہو قلق کیوں ہو فُغاں کیوں ہو



Jab hasil ho jaaye to khak barabar
Rizq bhi , ishq bhi , naseeb bhi raqeeb bhi

جب حاصل ہو جائے تو خاک برابر
رزق بھی عشق بھی نصیب بھی رقیب بھی



Yon tu jo chahe yahan sahib e mahfil ho jaaye
Bazm us shakhs ki hai tu jisse hasil ho jaaye

یوں تو جو چاہے یہاں صاحبِ محفل ہو جائے
بزم اس شخص کی ہے تُو جسے حاصل ہو جائے



Aankhon ki das taras se bhi bahar hai wo haseen
Aur dil ye chahta hai wo bahon mein qaid ho

آنکھوں کی دسترس سے بھی باہر ہے وہ حسیں
اور دل یہ چاہتا ہے وہ باہوں میں قید ہو



Koi is dor mein wo aaina taqseem kary
Jismein baaten bhi nazar aata ho zahir ki tarah

کوئی اس دور میں وہ آئینے تقسیم کرے
جس میں باطن بھی نظر آتا ہو ظاہر کی طرح



Humse kya puchna mizaj e hayat
Ham to bus ek derrida e daaman mein
Bhar k khakstar deyaar e wafa
Le k sadyon ki baas phirty hain
In dinon shahar bhar ke raston mein 
Ham akele udaas phirte hain

ہم سے کیا پوچھنا مزاجِ حیات
ہم تو بس اِک دریدہ دامن میں
بھر کے خاکستر دیارِ وفا
لے کے صدیوں کی باس پھرتے ہیں
ان دنوں شہر بھر کے رستوں میں
ہم اکیلے اداس پھرتے ہیں



Hay wo naye raabte main masroof honge
Hay ham purani yadon ko aziyat banaye baithe hain

ہائے وہ نئے رابطوں میں مصروف ہوں گے
ہائے ہم پرانی یادوں کو اذیت بنائے بیٹھے ہیں



Sara sar jindagi nikli mushaqat
Hamara waham tha soghaat hogi

سراسر زندگی نکلی مُشقت
ہمارا وہم تھا سوغات ہوگی



Zara si der mein utrega jab khumaar e jahan
Us ek shakhs ne behad pukarna hai mujhe

ذرا سی دیر میں اُترے گا جب خُمارِ جہاں
اس ایک شخص نے بے حد پُکارنا ہے مجھے




Ajeeb tarfa tamasha hai mere eud ke log
Sawal karne se pahle jawab mangte hain


عجیب طرفہ تماشا ہے میرے عہد کے لوگ
سوال کرنے سے پہلے جواب مانگتے ہیں



Aay dil tujhy dushman ki bhi pahchaan kahan hay
Tu halqa e yaraan me bhi mohtaat rha kar


اے دل تجھے دشمن کی بھی پہچان کہاں ہے
تو حلقہِ یاراں میں بھی مُحتاط رہا کر



Aur jab sahne ki lat lag jaaye
To kuchh kahane ki chah nahin rahti

اور جب سہنے کی لت لگ جائے
تو کچھ کہنے کی چاہ نہیں رہتی



Wo deta hai mujhe rasman tool e umar ki dua
Wo jeene ki aziyat se meri rihai nahin chahta

وہ دیتا ہے مجھے رسمً طولِ عمر کی دعائیں
وہ جینے کی اذیت سے میری رہائی نہیں چاہتا



Dukh ye nahin hai ki chhod gaya hai wo
Dukh ye hai ki palat kar poochha bhi na usne

دُکھ یہ نہیں ہے کہ چھوڑ گیا ہے وہ
دُکھ یہ ہے کہ پلٹ کر پوچھا بھی نہ اس نے



Saans lene mein jo ek lutf tha baki na raha
Zindagi ab fakat ek dard e sar si lagti hay

سانس لینے میں جو اِک لطف تھا باقی نہ رہا
زندگی اب فقط اِک دردِ سر سی لگتی ہے



Ek khushi hai ke jo lamhon mein simat jaati hai
Aik gham hai ke jo sadyon ke barabar thahra

اِک خوشی ہے کہ جو لمحوں میں سمٹ جاتی ہے
ایک غم ہے کہ جو صدیوں کے برابر ٹھہرا 



Wahi sifaat o khasaail hain aur wahi lahje
Ye log pahle kabhi bhediye rahy honge

وہی صفات و خصائل ہیں اور وہی لہجے
یہ لوگ پہلے کبھی بھیڑیے رھے ہوں گے



Wo jo pyaase the samundar se bhi pyaase laute
Unse pocho k sarabon me fusuun kitna hay

وہ جو پیاسے تھے سمندر سے بھی پیاسے لوٹے
ان سے پوچھو کہ سرابوں میں فسوں کتنا ھے



مچلتے رہتے ہیں ذہنوں میں وسوسوں کی طرح
پسندیدہ لوگ بھی جان کا وبال ھوتے ہیں



یوں دبائے جا رہا ہوں خواہشیں
جیسے اِک عہدِ جوانی اور ہے
اجنبی اِک پیڑ بھی ہے سامنے
اس کے گھر کی اِک نشانی اور ہے
پار جانے کا ارادہ تھا عدیم
آج دریا کی روانی اور ہے



ہر وصل پیش خیمہ رنجِ فراق ہے
تو ساتھ ہوگا اور تجھے ڈھونڈا کریں گے ہم



دمِ وصال جو ہے رنگِ عالمِ دنیا
بچھڑتے وقت بھی شاید یہی سماں ہوگا



تیری چاہت کی طلب نے ایسا جنون بخشا ہم کو
ہم خود کو بھول بیٹھے تمہیں یاد کرتے کرتے



ہم سے رکھے نہ سروکار ذرا بھی کوئی
ہم سیاہ بخت ہیں برباد ہوئے پھرتے ہیں



شاید اسی سبب سے ہیں بے تابیاں میری
پرکھا بہت گیا مجھے سمجھا نہیں گیا
دستک ہوئی سنی بھی گئی اس کے باوجود
دروازہ بند ہی رہا بو کھولا نہیں گیا



ٹوٹی ہوئی چیزیں بہت ہی پریشان کرتی ہیں جیسے کہ دل نیند بھروسہ اور سب سے زیادہ کسی سے رکھی ہوئی اُمید



ہماری نیکیوں کا کیا بنے گا صاحب
ہمارے شہر میں دریا نہیں ہے


نا التجا نہ کوئی واسطہ دیا میں نے
بچھڑنے والے کو بس راستہ دیا میں نے



التجا ہے اثر چشمِ تر رائیگاں
یہ جبیں رائیگاں سنگِ در  رائیگاں
نہ سُخن معتبر نہ نظر دل نشیں
اب تیرے روبرو سب ہُنر رائیگاں


جس رات برستے ہیں تیرے ہجر کے بادل
اس شب کو کہیں صبح کا تارا نہیں ہوتا
یونہی چلا آتا ہے میرے پہلو میں اکثر
وہ درد جسے میں نے پُکارا نہیں ھوتا