Zafar Iqbal Poetry In Urdu

 Zafar Iqbal Poetry

Zafar Iqbal's incomparable poetry in urdut, thebest collection of zafar iqbal poetry in urdu can be read on our website.




Main bhi kuch dar se baitha hun nishane pe zafar

Aur wo khencha hua teer bhi chal jana hay


میں بھی کچھ دِیر سے بیٹھا ھوں نشانے پہ ظفرؔ

اور وہ کھینچا ھوا __ ___ تیر بھی چل جانا ھے




Hamara ishq rawaan hay rukavaton me zafar
Ye khwaab hay kesi dewaar se nahi rukta

ہمارا عشق رواں ھے رُکاوٹوں میں ظفرؔ
یہ خواب ھے کسی دیوار سے نہیں رُکتا




Ham pe duniya hui sawar zafar
Aur ham hain sawar duniya par

ھم پہ دنیا ھوئی سوار ظفر
اور ھم ھیں سوار دنیا پر




Kahan chali gaiin kr k ye tod phod zafar
Wo bijliyan mery aasab se guzarty hue

کہاں چلی گئیں کرکے یہ توڑ پھوڑ ظفرؔ
وہ بجلیاں میرے اعصاب سے گزرتے ھوئے




Khairaat ka mujhy koi lalach nahi zafar
Main is gali me sirf sada karny aaya hun

خیرات کا مجھے کوئی لالچ نہیں ظفر
میں اس گلی میں صرف صدا کرنے آیا ھوں




Muskuraty huy milta hun kesi se jo zafar
Saaf pahchan liya jata hon roya hua main
 
مُسکراتے ھوئے ملتا ھوں کسی سے جو ظفر
صاف پہچان لیا جاتا ھوں رُویا ھوا میں




Aag jangal me lagi hay door dariyaon k paar
Aur koi shahr me phirta hay ghabraya hua

آگ جنگل میں لگی ھے دُور دریاؤں کے پار
اور کوئی شہر میں پھرتا ھے گھبرایا ھوا




Aankh k ek ishare se kiya gul usne

Jal rha tha jo diya itni hawa hoty hue


آنکھ کے اک اشارے سے کیا گُل اس نے

جل رہا تھا جو دیا اتنی ھوا ھوتے ھوئے



Bazar e bosa teez se hay teez tar zafar

Umeed to nahi ki ye mahngai khatm ho


بازارِ بوسہ تیز سے ھے تیز تر ظفر

اُمید تو نہیں کہ یہ مہنگائی ختم ھو



Kaise karen bandagi zafar waan

Bandon ki jahan khudaiyan hain


کیسے کریں بندگی ظفر واں

بندوں کی جہاں خدائیاں ھیں



Aakhir zafar hua hun manzar se khud hi ghaib

Usluub e khas apna main aam karty karty


آخر ظفر ھوا ھوں منظر سے خود ہی غائب

اسلوبِ خاص اپنا میں عام کرتے کرتے



Zafar zameen zaad thy zameen se hi kaam rakha

Jo aasmani thy aasmanon me rah gaye hain


ظفر زمیں زاد تھے زمیں سے ہی کام رکھا

جو آسمانی تھے آسمانوں میں رہ گئے ھیں



Ye bhi mumkin hay kh is kaar gah e dil me zafar

Kaam koi kary aur naam kesi ka lag jaaye


یہ بھی ممکن ھے کہ اس کار گہہِ دل میں ظفر

کام کوئی کرے اور نام کسی کا لگ جائے



Maut k saath hui hay meri shadi so zafar

Umr k aakhri lamhat me dulha hua main


موت کے ساتھ ھوئی ھے میری شادی سو ظفر

عمر کے آخری لمحات میں دُولہا ھوا میں



Ek lahar hay k mujhme uchalne ko hay zafar

Ek lafz hay k mujhse ada hony waala hay


اِک لہر ھے کہ مجھ میں اُچھلنے کو ھے ظفر

اِک لفظ ھے کہ مجھ سے ادا ھونے والا ھے



Ab k is bazam me kuch apna pata bhi dena

Paanv par paanv jo rakhna to daba bhi dena


اَب کے اس بزم میں کچھ اپنا پتہ بھی دینا

پاؤں پر پاؤں جو رکھنا تو دبا بھی دینا



Jhoot bola hay to qaaem bhi raho usper zafar

Aadmi ko sahab e kirdaar hona chahiye


جھوٹ بولا ھے تو قائم بھی رھو اس پر ظفر

آدمی کو صاحبِ کِردار ھونا چاہیئے



Khushi mili to ye aalam tha bad hawasi ka

Ki dhyaan hi na rha gham ki be libasi ka


خوشی ملی تو یہ عالم تھا بدحواسی کا

کہ دھیان ہی نہ رہا غم کی بے لباسی کا




Badan ka saara lahu kheench k aa gaya rukh par

Wo ek bosa hamain de k surkhru hay bahot

 

بدن کا سارا لہو کھنچ کے آگیا رُخ پر

وہ ایک بوسہ ہمیں دے کے سرخرو ھے بہت



Wahan maqam to rony ka tha magr aay dost

Tery firaq me hamko hansi bahot aai


وہاں مقام تو رونے کا تھا مگر اے دوست

تیرے فراق میں ھم کو ہنسی بہت آئی



Mujhse chudvae mary saary usuul usne zafar

Kitna chalak tha maara mujhy tanha kr k


مجھ سے چھڑوائے میرے سارے اصول اس نے ظفر

کتنا چالاک تھا مارا مجھے تنہا کرکے



Chehre se jhaad pichle baras ki kuduraten

Dewaar se purana calendar utar dy


چہرے سے جھاڑ پچھلے برس کی کدورتیں

دیوار سے پُرانہ کلینڈر اتار دے




Poori awaaz se ek rooz pukarun tujhko

Aur phir meri zaban par tera taala lag jaaye


پوری آواز سے اِک روز پکاروں تجھکو

اور پھر میری زباں پر تیرا تالا لگ جائے



Rook rakhna tha abhi aur ye awaaz ka ras

Beech lena tha ye sauda zara mahnga kr k


رُوک رکھنا تھا ابھی اور یہ آواز کا رَس

بیچ لینا تھا یہ سودا ذرا مہنگا کرکے